Top Panel
You are here: HomeNewsآئندہ سال کے لیے نظم جماعت کا تقرر ، کئی قرار داددیں پاس
Tuesday, 08 September 2015 18:29

آئندہ سال کے لیے نظم جماعت کا تقرر ، کئی قرار داددیں پاس

Rate this item
(2 votes)

۵؍ستمبر۲۰۱۵ء ؁

نومنتخبہ مرکزی شوریٰ کا پہلا اجلاس مرکز جماعت پر منعقد ہوا

سرینگر//جماعت اسلامی جموں وکشمیر کی نومنتخبہ مرکزی مجلس شوریٰ کا پہلا اہم اجلاس ۸؍ستمبر۲۰۱۵ء ؁ بروز منگل مرکز جماعت پر امیر جماعت غلام محمد بٹ کی صدارت میں منعقد ہوا جس میں اگلے میقاتی سال کے لیے نظم نو تشکیل دیا گیا۔ اس کے علاوہ تنظیمی صورتحال اور دعوتی سرگرمیوں کا جائزہ بھی لیا گیا اور عالمی صورتحال علی الخصوص ملت اسلامیہ کی موجودہ زبوں حالی کو بھی زیر بحث لایا گیا۔ مسئلہ کشمیر کے لٹکتے رہنے سے جنوبی ایشیا کے خطے میں جو بے چینی ، بدامنی اور غیر یقنی صورتحال پائی جاتی ہے علی الخصوص دو برادر ہمسایہ ممالک ہند و پاک کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی پر بھی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اس حقیقت کو اُجاگر کیا گیا کہ یہ مسئلہ جب تک یونہی لٹکتا رہے گا، تب تک صورتحال بدلنے کا کوئی امکان نہیں ہے بلکہ اس میں مزید ابتری پیدا ہونے کا بھر پور اندیشہ ہے۔

اگلے میقاتی سال( ستمبر۲۰۱۵ء ؁ تا آخر اگست۲۰۱۶ء ؁ )کے لیے جو تنظیمی ڈھانچہ مقرر کیا گیا وہ یوں ہے:
مرکزی نظم:
غلام قادر لون (قیم جماعت)، فہیم محمد رمضان و غازی معین الاسلام ندوی( معاونین قیم جماعت)،شیخ محمد حسن ( خصوصی مشیر برائے امیر جماعت)، محمد عبداللہ وانی( مہتمم ادارہ جات)، ڈاکٹر عبدالحمید فیاض( ناظم شعبہ رابطہ عامہ)،نذیر احمد رعنا ( ناظم تعلیم و تربیت)، شیخ بشیر احمد( ناظم ریکارڈس)، ایڈوکیٹ زاہد علی( ناظم شعبہ سیاسیات وترجمان)، محمد ابراہیم ڈار( ناظم مرکز)،طارق احمد خان ( ناظم شعبہ دعوت) محمد اشرف میر( ناظم شعبہ مومن)، پیر عبدالشکور( ایڈیٹر مومن)،جہانگیر احمد ندوی( ناظم شعبہ تدریس علوم شرعیہ)، محمد شفیع ڈار(آڈیٹر)، جوہرہ بابا( ناظمہ شعبہ خواتین)،پیرزادہ شبیر احمد( ناظم شعبہ نشر واشاعت)۔
امرائے اضلاع:
احمد اللہ پرے( اسلام آباد)، محمد یوسف راتھر( کولگام)، شاہ زادہ اورنگ زیب ندوی( شوپیان)، ریاض احمد ماگرے(پلوامہ)، بشیر احمد لون( سرینگر)، غلام محمد بٹ(بڈگام)، گل محمد وار( گاندربل)، محمد شعبان ڈار( بارہمولہ الف)، عبدالمجید ڈار( بارہمولہ ب)، عبدالجبار پائر( کپواڑہ الف)، محمد اسماعیل لون( کپواڑہ ب)، ڈاکٹر محمد اقبال( کشتواڑ)، غلام نبی سہیل( رام بن)، عبدالکریم ندوی( جموں)۔
ضلع ڈوڈہ اور بانڈی پورہ کے نظم کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔
اجلاس کے آخر پر مندرجہ ذیل قرار دادیں اتفاق رائے سے پاس ہوگئیں۔
(۱)۔ مسئلہ کشمیرجو۱۹۴۷ء ؁ سے لٹکتا آرہا ہے کے متعلق جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع اس حقیقت کا برملا اظہار کرتا ہے کہ جب تک یہ مسئلہ آرپار رہنے والے جموں وکشمیر کے پشتنی باشندوں کی اُمنگوں کو مد نظر رکھتے ہوئے یا تو اقوام متحدہ کی سیکورٹی کونسل میں پاس شدہ قرار دادوں کے مطابق یا سہ فریقی مذاکرات کے ذریعے حتمی طور پر عادلانہ طریقے پر حل نہیں کیا جاتا، تب تک جنوبی ایشیا کے اس عظیم خطے میں حقیقی امن و امان اور خوشحال زندگی کا قیام ناممکن ہے۔اس مسئلے نے دو ہمسایہ برادر ممالک ہند و پاک کے درمیان بے چینی، بدامنی اور غیر یقینی صورتحال کو جنم دیا ہے جو کم ہونے کے بجائے بڑھتی ہی چلی جاتی ہے اور اس کے نتیجے میں اب تک تین جنگیں بپا ہوچکی ہیں جن میں لوگوں کے جان و مال کو بے انداز نقصان ہواہے اور ان ممالک کی سرحدوں اور حدمتارکہ پر اکثر و بیشتر دونوں اطراف کی افواج کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوتا رہتا ہے جس کی زد میں آکر نزدیکی بستیوں کے بے گناہ باشندوں کو مال و جان کا نقصان اُٹھانا پڑتا ہے۔
جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع، اقوام عالم اور علی الخصوص اقوام متحدہ کے ذمہ داروں کے علاوہ اسلامی ممالک کی تنظیم سے بھی اپیل کرتا ہے کہ وہ اس انسانی مسئلے کو یہاں کے عوام کی اُمنگوں کے مطابق حل کرانے کی خاطرمؤثر اقدامات کریں نیز ہندو پاک کی دو برادر ہمسایہ مملکتوں کے سربراہوں پر بھی زور دیا جاتا ہے کہ وہ آگے آکر اس دیرینہ مسئلے کو حتمی طور پر حل کرانے کی خاطر، یاتو اقوام متحدہ میں پاس شدہ قرار دادوں کو عملائیں یا سہ فریقی مذاکرات جس میں آر پار جموں وکشمیر کے حقیقی نمائندوں کی بحیثیت بنیادی فریق کے شرکت لازمی ہو،کا انعقاد کرکے اس مسئلے کا ایک ایسا حل تلاش کریں جو یہاں کے عوام کے اُمنگوں کا ترجمان ہو۔
(۲)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع موجودہ دور میں ملی اتحاد کی ناگزیر ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے، ریاست کی تمام دینی اور حریت پسند سیاسی تنظیموں اور قائدین اور کاروبار زندگی سے تعلق رکھنے والے مختلف دانشوروں سے پُر زور اپیل کرتا ہے کہ وہ ملت کے مختلف طبقات کے درمیان پائی جانے والی کشیدگی جو ملت کے مستقبل کے لیے مہلک ہے، کو کم کرانے کی طرف فوری طور پر متوجہ ہوجائیں۔علماء کرام اور دانشور حضرات کی یہ منصبی ذمہ داری ہے کہ وہ مسلم عوام کو اتحاد و اتفاق کی برکات اور انتشار و افتراق کی نحوستوں سے خبردار کرتے ہوئے، مسلکی اور گروہی اختلافات سے بالاتر ہوکر دین کے بنیادی اصولوں کی بنیاد پر ملت کے اتحادکو فروغ دینے کی خاطر تمام ضروری اقدامات کریں۔ جماعت اسلامی ، ماضی کی طرح ایسی تمام اتحادی کوششوں کے لیے مخلصانہ تعاون فراہم کرنے کی وعدہ بند ہے اور یہ تعاون ملت اسلامیہ کو ایک سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح مضبوط و مربوط کرنے تک جاری و ساری رہے گا۔
(۳)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع ریاست جموں وکشمیر کی مسلم اکثریتی کردار اور مسلمانوں کی دینی شناخت کے خلاف رچی جانے والی سازشوں پر اپنی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، فرقہ پرست قوتوں جن کی سرپرستی آر ایس ایس جیسے فرقہ پرست گروہ کر رہے ہیں کو خبردار کرتا ہے کہ ملت اسلامیہ کشمیر کبھی ان سازشوں کو کامیاب نہیں ہونے دے گی اور اس ریاست کے مسلم اکثریتی کردار اور مسلمانوں کی دینی شناخت کو قائم رکھنے کی خاطر جماعت اسلامی ہر مکروہ سازش کا بھر پور مقابلہ کرے گی۔
(۴)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع ریاست میں عوام کے بنیادی حقوق کی خلاف ورزیوں پر اپنی گہری ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے، نوجوانوں کو بے بنیاد کیسوں میں ملوث کرکے انہیں گرفتار کرنے کا سلسلہ بند کرنے پر زور دیتا ہے کیونکہ ان بے جاگرفتاریوں سے عوام میں ایک خوف و دہشت کا ماحول پیدا ہوا ہے اور والدین اپنے بچوں کے تحفظ کے حوالے سے کافی فکر مند نظر آتے ہیں جس کی وجہ سے وہ قلبی سکون سے محروم ہوگئے ہیں۔ نیز یہ نمائندہ اجتماع اُن تمام محبوسین کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتا ہے جو مسئلہ کشمیر کے حوالے سے مختلف جیلوں اور زندان خانوں میں بند پڑے ہیں جن میں وہ قیدی بھی شامل ہیں جن پر اس حوالے سے مختلف الزامات لگواکر عمر قید کی سزائیں بھی دلوائیں گئیں۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع ان تمام سیاسی نظر بندوں اور قیدیوں کی فوری رہائی کا زور دار مطالبہ کرتا ہے۔ اس قسم کے قیدیوں کو دہشت گردی کے زمرے میں شامل کرنا، ایک غیر منصفانہ اور غیر اخلاقی فیصلہ ہے کیونکہ ان افراد کو عوام کے بنیادی حق، حق خود ارادیت کی جائز آواز اُٹھانے کی پاداش میں مورد الزام ٹھہراکر، سزائیں دلوائی گئیں۔
(۵)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع ریاست میں بڑھتی ہوئی بے راہ روی اور مادہ پرستی پر اپنی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، عوام کو ان عناصر بدپر کڑی نظر رکھنے کی تلقین کرتا ہے جو یہاں غیر اخلاقی اور دین بیزار ی کو فروغ دینے کے درپے ہیں اور جن میں سے چند عناصر کو حکومتی ایجنسیوں کی سرپرستی بھی حاصل ہے۔یہ نمائندہ اجتماع علمائے کرام کو اس اہم اور نازک مسئلے کی طرف متوجہ کرتے ہوئے، ان عناصر کی سرکوبی کی خاطر مشترکہ لائحہ عمل تشکیل دینے کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔
(۶)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع محسوس کرتا ہے کہ جموں میں ایک منصوبہ کے تحت فرقہ پرست قوتیں وہاں بسنے والے مسلمانوں کو ہراساں کرنے کی کارروائیاں وقت وقت پر انجام دے رہی ہیں تاکہ وہاں ان کا عمل دخل نہ ہونے کے برابر ہو، وہاں ہرسطح پر ان مسلمانوں کے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا جارہا ہے جس پر یہ نمائندہ اجتماع اپنی واضح برہمی کا اظہا ر کرتے ہوئے،فرقہ پرست قوتوں کو لگام دینے پر زور دیتا ہے۔ نیز جموں کے مسلمانوں کے ساتھ یہ نمائندہ اجتماع مکمل یکجہتی کا اظہار کرتا ہے۔
(۷)۔ جماعت اسلامی کا یہ نمائندہ اجتماع،۱۹۹۰ء ؁ میں کشمیر چھوڑ کر چلے جانے والے پنڈتوں کی گھر واپسی کا خیر مقد م کرتا ہے بشرطیکہ وہ اُسی طرح باہمی رواداری کے ساتھ اپنے مسلمان ہمسائیوں کے ساتھ اپنی اپنی بستیوں میں رہائش اختیار کریں،جس طرح وہ ماقبل رہا کرتے تھے۔ اُن کے لیے کسی سیکورٹی حصار میں الگ کالونیاں قائم کرنا، صدیوں پرانی روادارانہ روایت کے بالکل خلاف ہونے کے علاوہ یہاں کے مسلمانوں کے مفادات کے خلاف ایک گہری سازش ہے۔ اس لیے اس طرح کی الگ پنڈت کالونیاں یہاں کے عوام کے لیے کبھی بھی قابل قبول نہیں ہوسکتی ہیں۔

Read 597 times

Al'Quraan

The woman and the man guilty of illegal sexual intercourse, flog each of them with a hundred stripes. Let not pity withhold you in their case, in a punishment prescribed by Allah, if you believe in Allah and the Last Day. And let a party of the believers witness their punishment. (This punishment is for unmarried persons guilty of the above crime but if married persons commit it, the punishment is to stone them to death, according to Allah's Law).

Al'Quraan Surah Noor

Prophet Mohammad PBUH

Narrated: Abu Huraira (R.A) that a man said to the Prophet, sallallahu 'alayhi wasallam: "Advise me! "The Prophet (PBUH) said, "Do not become angry and furious." The man asked (the same) again and again, and the Prophet said in each case, "Do not become angry and furious." [Al-Bukhari; Vol. 8 No. 137]

Sunan Abu-Dawud.

eXTReMe Tracker