Top Panel
You are here: HomeNewsشرنارتھیوں کو بسانا، پنڈتوں کے لیے الگ بستیاں سازشیں ہیں قیم جماعت
Sunday, 26 April 2015 08:02

شرنارتھیوں کو بسانا، پنڈتوں کے لیے الگ بستیاں سازشیں ہیں قیم جماعت

Rate this item
(0 votes)

کولگام میں جماعت اسلامی کے سالانہ اجتماع میں ہزاروں لوگوں کی شرکت

سرینگرجماعت اسلامی جموں وکشمیر ضلع کولگام کا سالانہ اجتماع آج دارالامان چھتہ بل کولگام میں منعقد ہوا ۔ اجتماع میں ضلع بھر کے علاوہ دیگر اضلاع سے بھی ہزاروں لوگوں نے شرکت کی۔ اس بھاری عوامی جلسے میں اپنے خطاب عام میں قیم جماعت اسلامی جموں وکشمیر ڈاکٹر عبدالحمید فیاض نے کہا کہ کشمیریوں کی جدوجہد برائے حق خود ارادیت جائز جدوجہد ہے اور یہ کوئی وقتی تحریک نہیں جو کشمیری عوام نے برپا کر رکھی ہے بلکہ ٧٤٩١ئ؁ میں اس مسئلے کے جنم کے وقت سے ہی کشمیری عوام نے اپنے جائز حقوق کی بازیابی کے لیے جدوجہد شروع کی ہے۔ انہوں نے جماعت اسلامی کے دیرینہ مؤقف کو دوہراتے ہوئے کہا کہ جماعت اسلامی جموں وکشمیر کا مسئلہ کشمیر کے حوالے سے دوٹوک اور واضح مؤقف شروع سے ہی رہا ہے۔ جماعت چاہتی ہے کہ اس مسئلے کا حل اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق نکالا جانا چاہیے او راگر کسی وجہ سے اُن قرار دادوں کو عملانا ناممکن بن جائے تو پھر سہ فریقی مذاکرات کے ذریعے سے، جس میں کشمیریوں کے حقیقی نمائندے شامل ہوں اس مسئلہ کا حل کشمیریوں کی خواہشات کے عین مطابق نکالا جانا چاہیے ۔جموں میں مغربی پاکستان سے آئے ہوئے شرنارتھیوں کو ریاست کی مستقبل شہریت عطا کیے جانے کے حکومتی اداروں کو تشویشناک قرار دیتے ہوئے قیم جماعت نے کہا کہ یہ اقدام ریاست جموں وکشمیر میں آبادی کا توازن بگاڑنے کر ریاست کی مسلم شناخت کوختم کرنے کی سازش ہے اور اس کے لیے جموں سے اسکولی سطح پر ہی مستقل شہریت کی سند عطا کرنے سے آغاز کیا جارہا ہے۔ جماعت اسلامی ایسے کسی بھی اقدام کو تشویش کی نظر سے دیکھتی ہے اور واضح کرتی ہے کہ شرنارتھیوں کو ریاست کی مستقل شہریت عطا کیے جانے سے ریاست کی مسلم شناخت متاثر ہوجائے گی جس کی ریاستی عوام اجازت نہیں دے گی۔کشمیری پنڈتوں کی وادی واپسی کے مسئلہ پر بات کرتے ہوئے قیم جماعت نے کہا جماعت اسلامی کشمیری پنڈتوں کی گھر واپسی کے خلاف نہیں ہے بلکہ جماعت پنڈتوں کے لیے الگ بستیاں قائم کرنے کی مخالفت کرتی ہے۔ پنڈتوں کے لیے الگ بستیوں کے قیام سے آپسی بھائی چارے میں یقین رکھنے والا کشمیری سماج تقسیم ہوجائے گا ۔قیم جماعت نے ہندوتو اطاقتوں کی فرقہ پرست ذہنیت سے ہوشیار رہنے کی عوام سے اپیل کی ۔

 بعض حلقوں کی جانب سے اس پروپیگنڈہ کہ جماعت اسلامی نے ایک مخصوص ہند نواز سیاسی جماعت کو الیکشن میں مدد کی ہے کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ایسے لوگوں کو شرم کرنی چاہیے جو جماعت اسلامی پر تہمتیں لگا رہے ہیں ۔ جماعت اسلامی باطل کا ساتھ دینے والی جماعت نہیں ہے بلکہ جماعت ہمیشہ حق کی علمبردار رہی ہے اور اگر اس بات میں ذرّا برابر بھی سچائی ہوتی کہ جماعت نے الیکشن میں کسی جماعت کی طرف دار کی ہے تو پھر آج بیشتر لوگ اسمبلی میں نہیں ہوتے۔یہ محض جماعت دشمن طاقتوں کا الزام ہے۔ جماعت حق کی علمبردار رہی ہے اور حق کی ہمیشہ طرفدار رہے گی۔انسانی حقوق کی مسلسل خلاف    ورزیوں پر غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے ڈاکٹر عبدالحمید فیاض نے کہا کہ ترال میں خالد مظفر اور ناربل بڈگام  میں سہیل احمد صوفی کی جرم بے گناہی میں جان بحق کرنا ریاستی دہشت گردی کی بدترین مثالیں ہے اور دونوں  واقعات ریاستی سرکار کے بلند بانگ دعوؤں کی حقیقت ظاہر کرتی ہے۔قیم موصوف نے ریاستی میں حریت لیڈران  اور نوجوانوں کی گرفتاریوں کی بھی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ بے گناہ نوجوانوں کو گرفتار کرکے  اُنہیں جیلوں کے اندر ٹھونس دینا سراسر ظلم و زیادتی ہے اور جماعت اسلامی جموں وکشمیر ان ظلم و زیادتیوں کی  شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔قیم جماعت نے کہا کہ ہم اتحاد کے داعی ہیں اور ہم تم دینی تنظیموں اور اداروں کو  اتحاد کی دعوت دیتے ہیں ۔عالمی اسلام کی صورتحال پر بات کرتے ہوئے قیم جماعت نے کہا کہ مشرق سے مغرب  اور شمال سے جنوب تک ہر جگہ مسلمان درد و کرب میں مبتلا ہیں ۔اُمت مسلمہ کو داخلی سطح پر دو حصوں میں    تقسیم کرنے کی سازشیں ہورہی ہیں ۔ یمن کی حالیہ جنگ اس کی ایک مثال ہے اور اس جنگ میں پوری مسلم ورلڈ کو ملوث کیا جارہا ہے۔ مصر میں اخوان المسلموں کو تختہ مشق بنایا جارہا ہے اور اِسی طرح بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے لیڈران کو تختہ دار پر لٹکایا جارہا ہے۔شام اور افغانستان کی صورتحال بھی تشویشناک ہے۔ قیم جماعت نے عالم اسلام کے حکمرانوں کی بے حسی اور مغرب نوازی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے مسلمانوں سے اپیل کی کہ وہ اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں اور دشمنوں کی سازشوں سے باخبر رہیں ۔قیم جماعت نے اخوان اور جماعت اسلامی بنگلہ دیش کے لیڈران اور کارکنان کی عظمت کو سلام پیش کیا اور مغرب پرست مسلم حکمرانوں کے ظلم و جبر کی مذمت کی۔اس سے قبل امیر جماعت جموں و کشمیر محمد عبداللہ وانی نے سورۂ فاتحہ کی روشن میں درس قرآن پیش کرتے ہوئے کہا کہ عقیدۂ آخرت انسان کو گمراہی اور ظلم سے بچاتا ہے اور جس شخص کے پاس روز جزا و سزا کا راسخ عقیدہ موجودنہیں ہوتا ہے وہ ظالم ، جابر اور فاسق بن جاتا ہے۔ اُس کے لیے انسانی حقوق کی پامالیاں کوئی نئی بات نہیں ہوتی ہیں بلکہ وہ ایسی گھناؤنی حرکات کا ارتکاب کرنے سے دریغ نہیں کرتا جو انسان اور انسانیت کے شایانِ شان نہیں ہوتے ہیں ۔موصوف نے کہا کہ سورۂ فاتحہ ہمیں اجتماعیت کا درس دیتا ہے اور اُمت مسلمہ کو اپنے بکھرے پڑے وجود کو سمیٹ کر اجتماعیت قائم کرنی چاہیے ۔اِسی میں اُمت مسلمہ کی بھلائی ہے اور اجتماعیت اور اتحاد میں ہی اُمت مسلمہ کے تمام مسائل کا حل موجود ہے۔اس اجتماع میں نائب امیر جماعت نذیر احمد رعنا نے درس حدیث دیا۔ جن دوسرے مقررین نے مختلف موضوعات پر خطابات کیے اُن میں سابق امیر جماعت شیخ محمد حسن، امیر ضلع محمد یوسف راتھر، معاون ناظم شعبہ دعوت و تربیت مولانا غازی معین الاسلام ندوی کے علاوہ ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ عمر سلطان شامل تھے۔ اجتماع کے دوران امیر جماعت محمد عبداللہ وانی نے چنار پبلی کیشنز کی جانب سے شائع کردہ کتاب’’ہم نے جماعت اسلامی کو کیسے پایا؟‘‘ کے علاوہ مزید کئی کتب کی رسم رونمائی بھی کی ہے۔ نماز عصر کے ساتھ ہی اجتماع اختتام پذیر ہوا۔

Read 446 times

Al'Quraan

The woman and the man guilty of illegal sexual intercourse, flog each of them with a hundred stripes. Let not pity withhold you in their case, in a punishment prescribed by Allah, if you believe in Allah and the Last Day. And let a party of the believers witness their punishment. (This punishment is for unmarried persons guilty of the above crime but if married persons commit it, the punishment is to stone them to death, according to Allah's Law).

Al'Quraan Surah Noor

Prophet Mohammad PBUH

Narrated: Abu Huraira (R.A) that a man said to the Prophet, sallallahu 'alayhi wasallam: "Advise me! "The Prophet (PBUH) said, "Do not become angry and furious." The man asked (the same) again and again, and the Prophet said in each case, "Do not become angry and furious." [Al-Bukhari; Vol. 8 No. 137]

Sunan Abu-Dawud.

eXTReMe Tracker