Top Panel
You are here: HomeNewsجماعت اسلامی کی مرکزی مجلسٍ شوریٰ کا یک روزہ اجلاس منعقد
Wednesday, 25 March 2015 15:36

جماعت اسلامی کی مرکزی مجلسٍ شوریٰ کا یک روزہ اجلاس منعقد

Rate this item
(0 votes)

بیرون ریاست طلبہ و تاجر برادی پر حملوں کی کڑی مذمت/ مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی قراردادوں میں موجود
سرینگر//جماعت اسلامی جموں وکشمیر کی مرکزی مجلس شوریٰ کا ایک یک روزہ اجلاس ۲۵؍مارچ ۲۰۱۵ء کو مرکز جماعت باراں پتھر بتہ مالو پر زیر صدارت امیر جماعت محمد عبداللہ وانی منعقد ہوا جس میں تنظیم کی گزشتہ سال کی کارکردگی کا بھر پور جائزہ لینے کے علاوہ‘ اس کے استحکام سے متعلق کئی تجاویز پر بحث و مباحثہ ہوا۔ نیز اسلام کی عالمگیر انقلابی دعوت سے عوام الناس کو روشناس کرانے کی خاطر دعوت و تربیت کے شعبہ کو مزید فعال بنانے کی خاطر کئی اقدامات کئے گئے۔ عالمی سطح پر اسلام مخالف پروپگنڈہ پر کافی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے‘ اجلاس میں اس حوالے سے اُمت مسلمہ کی بیداری کی ضرورت پر زور دیا گیا تاکہ تمام وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے اسلام کے خلاف چلائی جارہی عالمی سطح کی مذموم مہم کو ناکام بنایا جاسکے۔ نیز اُمت مسلمہ کے مابین جاری طبقاتی کشمکش جو اُمت کے عروج اور اسلام کے احیائے نو میں ایک اہم سنگ راہ ثابت ہورہی ہے‘ پر زبردست افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اجلاس میں اُمت سے وابستہ تمام طبقہ ہائے فکر کے علماء کرام اور دانشور حضرات پر زور دیا گیا کہ وہ اُمت کو اس خطرناک صورتحال سے نجات دلانے کی خاطر مؤثر اور ٹھوس اقدامات کریں اور اس کے لیے قرآن و سنت کی تعلیمات کی روشنی میں ایک مشترکہ لائحہ عمل تشکیل دیں اور عامۃ الناس کو اس شدید انتشاری کیفیت کے نقصانات سے آگاہ کرتے ہوئے‘ اتحاد و اتفاق کی برکات کو بھی واضح کریں کیوں کہ یہی وہ صورت ہے جس سے اُمت اپنا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرسکتی ہے۔


اجلاس میں مسئلہ کشمیر کے متعلق جماعت اسلامی کے دیرینہ مؤقف کا اعادہ کرتے ہوئے اس متنازعہ بین الاقوامی مسئلے کو جموں وکشمیر کے اندر مستقل سکونت رکھنے والوں کا بنیادی اور اہم ترین مسئلہ قرار دیا گیا جس کے حل طلب رہنے سے جنوبی ایشیا کا یہ عظیم خطہ غیر یقینی صورتحال سے دوچار ہے اور اس کا امن مسلسل داؤ پر لگاہوا ہے۔ اس مسئلے کو حتمی طور پر عادلانہ طریقے سے حل کرانے کے لئے ضروری ہے کہ یہاں کے عوام کے جذبات اور اُن کی خواہشات کے مطابق اس کا ایک ایسا حل تلاش کیا جائے جو سب کے لیے قابل قبول ہو اور یہاں پائی جارہی غیر یقینی صورتحال جس نے یہاں کے لوگوں کی زندگی کو اجیرن بناکر رکھ دیا ہے‘ کا خاتمہ ہو اور یہاں حقیقی امن قائم ہونے کے ساتھ ساتھ خوشحالی کے ایک دورِ نو کا آغاز ہو۔ دو فریقی یا کسی دیگر روایتی طریقے سے اس مسئلے کا کوئی پائیدار حل نکل آنے کی خواہش کرنا‘ ایک سراب ہے۔ اقوام متحدہ کے سلامتی کونسل کی پاس کردہ قراردادوں میں اس دیرینہ انسانی مسئلے کا بہترین حل موجود ہے بصورت دیگر ہندوپاک کی حکومتوں کے ساتھ ساتھ کشمیری عوام کے حقیقی نمائندوں کو مل بیٹھ کر مشترکہ طور پر اس کا ایک ایسا حل تلاش کرنا چاہیے جو یہاں کے عام کی اُمنگوں کے عین مطابق ہو۔ اس سلسلے میں کسی ہٹ دھرمی کا اظہار یا تاخیر‘ جنوبی ایشیا کے جملہ عوام کے مفادات کو زک پہنچانے کے مترادف ہے۔
اُمت مسلمہ کے اندر بے راہ روی‘ فحاشی اور مادہ پرستی کے مہلک امراض کو جس طرح ایک منظم صورت میں فروغ دیا جارہا ہے جس کا خاص نشانہ نوجوان طبقہ ہے‘ اس پر اجلاس میں زبردست تشویش کا اظہار کرتے ہوئے‘ ان امراض کے استیصال کے لیے وسیع پیمانے پر عوام کے اندر دینی بیداری کو پید اکرنے اور اس کے لیے ایک مشترکہ لائحہ عمل تشکیل دینے کے لیے کوششیں کرنے کو وقت کی ایک اہم ضرورت ہے۔ اجلاس میں یہ بری طرح محسوس کیا گیا کہ انسانی زندگی میں دین کی اہمیت اگر چہ آکسیجن سے بھی زیادہ ہے مگر اُمت کے اندر عموماًاس سلسلے میں غفلت کا اظہار ہورہا ہے۔ زندگی سے دین کو بے دخل کرنا اس کی مقصدیت کو ضائع کرنے کے مترادف ہے۔ اجلاس میں اس بات پر زور دیا گیا کہ اُمت مسلمہ کو یہ حقیقت ذہن نشین کرانے کی اشد ضرورت ہے کہ بے دین زندگی کبھی خوشحال اور پُر امن نہیں ہوسکتی ہے۔
ریاست سے باہر عارضی طور پر مقیم کشمیریوں کو جس طرح ہراساں کیا جارہا ہے اور معمولی بہانوں کی آڑ میں اُن پر مسلح حملے کئے جارہے ہیں اور ہراساں کرنے کے اس عمل میں وہاں کی پولیس بھی برابر کی شریک ہے۔ اس کا سب سے بُرا اثر بیرون ریاست مختلف تعلیمی و تکنیکی اداروں میں زیر تعلیم کشمیری طلبہ و طالبات پر پڑ رہا ہے اور یہ اُن کے تعلیمی کیرئیر کے لیے زبردست نقصان کا مؤجب بن رہا ہے۔ بہت سے کشمیری طلباء اپنی تعلیمی سلسلہ کو منقطع کرکے واپس گھر آنے پر مجبور ہوگئے اور انہیں کافی مالی نقصانات سے بھی دوچار ہونا پڑا۔ یہاں کی انتظامیہ اس سلسلے میں حسب توقع رول ادا کرنے میں ناکام ہوئی ہے جس سے ان طلباء کے والدین اور دیگر لواحقین کو وقت وقت پر کافی پریشانی اُٹھانی پڑتی ہے۔ بھارت کے فرقہ پرست عناصر کشمیری طلباء اور تاجر برادری کو ہراساں کرنے پر تلے ہوئے ہیں۔ اجلاس میں فرقہ پرست عناصر کی کشمیری طلباء و تاجر حضرات کو ہراساں کرنے کی کارروائیوں کی کڑی مذمت کرتے ہوئے ان عناصر بد کو لگام دینے پر زور دیا گیا جو ان کارروائیوں میں ملوث ہوں۔
اجلاس میں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے مقامی و غیر ریاستی جیلوں اور سرکاری اذیت خانوں میں محبوس لیڈروں اور کارکنوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے اجلاس میں ان تمام محبوسین کی غیر مشروط رہائی پر زور دیا گیا۔ نیز اجلاس میں ایسے محبوسین کے ساتھ خصوصی سلوک کرنے کا بھی مطالبہ کیا گیا۔
جموں وکشمیر کے مسلم اکثریتی کردار کو تبدیل کرانے کی خاطر جس طرح پراسرار طریقے سے سازشیں ہورہی ہیں اور بھارتی حکومت کے ذمہ دار بار بار اس سلسلے میں ایسے بیانات دے رہے ہیں جن سے واضح ہوتا ہے کہ یہاں کی مسلم اکثریتی آبادی کو اقلیت میں تبدیل کرانے کی خاطر کوئی خفیہ منصوبہ زیر عمل ہے۔ کبھی مغربی پاکستان کے رفیوجیوں کو یہاں بسانے کی باتیں کی جارہی ہیں اور کبھی دفعہ ۳۷۰؍کے خاتمے کی دھمکیاں دی جارہی ہے۔ اصل میں اس طرح یہاں غیر ریاستی لوگوں کو مستقل طور پر بسانے کے منصوبوں کو عملانے کی کوششیں ہورہی ہیں۔
اجلاس میں بھارتی حکومت کی ان مذموم سازشوں پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے یہاں کے عوام کو اس سلسلے میں ہوشیار رہنے کی اپیل کی گئی اور یہاں کے حریت نواز زعماء اور تنظیموں پر بھی زور دیا گیا کہ ایسی تمام سازشوں کو ناکام بنانے اور جموں وکشمیر کی مسلم اکثریتی شناخت کو محفوظ رکھنے کی خاطر عوام کے تعاون سے ایک مشترکہ لائحہ عمل تشکیل دیں۔

Read 378 times

Al'Quraan

The woman and the man guilty of illegal sexual intercourse, flog each of them with a hundred stripes. Let not pity withhold you in their case, in a punishment prescribed by Allah, if you believe in Allah and the Last Day. And let a party of the believers witness their punishment. (This punishment is for unmarried persons guilty of the above crime but if married persons commit it, the punishment is to stone them to death, according to Allah's Law).

Al'Quraan Surah Noor

Prophet Mohammad PBUH

Narrated: Abu Huraira (R.A) that a man said to the Prophet, sallallahu 'alayhi wasallam: "Advise me! "The Prophet (PBUH) said, "Do not become angry and furious." The man asked (the same) again and again, and the Prophet said in each case, "Do not become angry and furious." [Al-Bukhari; Vol. 8 No. 137]

Sunan Abu-Dawud.

eXTReMe Tracker